Tag Archives: Book

INDEX

IBTADAIA

DUA

Roshni Ae Roshni

Jab Bhi Kehta Houn Koi Taaza Ghazal Tere Lie

Teri rahhoun main bhatak’nay k liye zinda houn

SHOLA

Raakh

Sooraj mere Dil main Jal Raha hay

Zakhmoun ko Gulaab Likh Rahay Hain

Baanjh Mosamo Ki Raagni

Dunya Meri Abaad Hay Jis Raaht-e-Jaan Say

Roshan Woh Mera Gosha-e-Tanhai To Kar Jaye

Asbiyyat

Jamhooriat

 Gaye Baras jo geet suna tha haryalay 

Ansoo Ansoo Har Qatra Shabnam Ka Hay

Jo Khud Is ka Rasta rokain Unkay 

Shanakht

Sarapa Gham Hain Aur Woh Gud’gudana Chahta Hay

Woh Khull Kar Ab Koi Jalwa Dikhana Chahta Hay

Afro Asiai Naghma

Seenay Main Hasratoun Ki Jalan Chahta Nahein

Yaaro Kahan Tak Aur Muhabbat Nibhaoun Main

Ghubaar Baith Gaya

Muhabbat Ho Rahi Hay Taaza Dam Ahista Ahista

Hawaoun Ki Zubaani Sun Liya Hoga Sitaroun Nay

Wafa Ka Bojh Hay Sir Per

Kokh Jali

Jaisa Us K Liye Suna Tha Waisa Hay

Guzra Hay Baigana Ban Kar Kaisa Woh

Lay Gaya Apni Sab Reekh’aen Apnay Saath

Silsila Khyaloun Ka

Tootay Gi Deewar

Ek Baar Jo Tak Lay Usay Takta Hi Chala Jaye

Bay Zauq Thi Ya Husn Say Aagah Thi Pehlay 

Sehraoun Main Ek Chaoun Si Bikhrati Rahay

Daro Us waqt Say

Mairaaj-e-Nazar

Apnay Laboun Ko Dushman-e-Izhaar Mat Bana

Roka Hay Tou Nay Jis Ko Sada Arz-e-Haal Say

Girya-e-Mussarat

Aakhir Woh Mere Qadd Ki Bhi Hadd Say Guzar

Kuch Raahtoun Ki Khoaj Main Aai Thi Zindagi

IQRA

Hawa Ki Lehar Koi Cho K Mere Yaar Say Aai

Woh Saawan Jis Main Zulfoun Ki Ghata Chaai Nahin Hoti

Mojzaa

Kashish-e-Jamal

Dil Laga Baitha Houn Lahore K Hangamoun Say

jab kisi jaam ko honton se lagaya mein ne

Jab Say Aaya Hay Tere Payaar Ka Mosam Janaan

اب اور تب !

خود فریبی

دست عوام ہو کہ گریبان شہر یار

جب سے لبوں پہ شورِ گُلو ناچنے لگا

شہرِآشوب

ہر نئے سُورج کی رہ رہ کر پذیرائی کریں

کون کس کے ہاتھ آیا اور کھلونا ہو گیا؟

اپنی اپنی سوچ کے صحراوں میں

کیڑا ، رزق اور پتھر

وہ شخص جس کو مِری زندگی میں آنا تھا

نہ ولولے وہ رہے اور نہ وہ زمانہ رہا

اگرچہ بزم میں درد آشنا بھی کہتا ہے

لفظوں کی بانبی کا سانپ

صرف ترے ہاتھوں کو چوموں ،تیری بیعت چاہوں

چاند بھی راہ میں کیا ہے روشن پھر بھی کوئی نہ آیا

خُون کی دستک

زلزلے

اسیری کے نشاں سارے کے سارے برمحل رکھنا

اگر چاہو تم اپنی حسرتوں کو تازہ دم رکھنا

ایک انوکھی لڑکی

اُس کی زلف کے سائے سائے چلا کرو

اس دھرتی کے شیش ناگ کا ڈنک بڑا زہریلا ہے

یوں لگتا ہے لاش ہماری موم کا پہنے ہوئے کفن ہے

میلی روشنیاں

دینِ بے وجود

کُچھ ذی ہُنر جو بے ہُنروں کی طرح جیے

افشا بس اِک جھلک میں کہانی وہ کر گیا

ردِّ نعمت

تحفط

غبارِ رہگزر جب پردہِ محمل پہ گِرتا ہے

ضروری چیز جو مانگو  وہی اکثر نہیں دیتا

کہانی ختم ہوئی

چمک آتی ہے آنکھوں میں کبھی کچھ سائے آتے ہیں

اگر وہ شخص خود چل کر تمہارے پاس آیا ہے

ہوم سِک

جو پُل صراط بناتے ہیں  رہگزر کی جگہ

خموش رہ کے بھی آنکھوں سے بات کرتا ہے

احتساب

منزلِ مقصود

شوقِ جلوہ ہے مگر ذوقِ نظر نابینا ہے

کر رہے تھے قریہ قریہ زندگی کی جُستجو، میں اور تُو

رُو برو وہ ہے عبادت کر رہا ہوں

فلیش بیک

ہاتھیوں کا لشکر

پیتا ہے خون اپنا حالات کے مگوں میں

کیا حسیں آنچ ہے مگر قریب جائے کون

دو عادتیں

ایک گم صُم فضا کے سوا کُچھ نہ تھا میری چُپ چاپ حیرانیوں کے لیے

باہر کی چمک بھی کیا کم تھی پر بہت کچھ اس کے اندر تھا

گونگے میرے شہر کے

میں خُدا سے کیا کہوں؟

شرمندہ انھیں اور بھی اے میرے خدا کر

چھائی ہوئی گھنگھور گھٹا ہے مرے سر پر

شانزے لیزے

روشنی چاہیے صبا کے لیے

جسم کے جزیرے میں، یہ جو دل کی وادی ہے

بے تعبیر

اے کاش تجھے ایسا اِک زخمِ جدائی دوں

دُنیا کو دکھانی ہے اک شکل خیالوں کی

چاند، بُڑھیا اور پتھّر

دن بھر ستانے کے لیے پیڑوں سے چھن کر آگئی

113.       یہاں ظلم بندوں پہ جب ہو رہا تھا وہ کیوں چُپ رہا

114.       دوہا

115.       رُباعی

116.       خماسی

117.       رفتگاں

118.       مولانا صلاح الدین احمد

119.       سپنوں کا بنجارا  _____فیضؔ

120.       ساحرؔ کے لیے

121.       فِکرؔ تونسوی

122.       اکبر ؔ لاہوری