یہ تیرا پھول سا چہرہ – قتیل شفائی


یہ تیرا پھول سا چہرہ – قتیل شفائی by QateelShifai

فلم : آدمی (1978) ۔۔ موسیقار : ایم اشرف
گلوکار : مہدی حسن ۔ شاعر: قتیل شفائی

یہ تیرا پھول سا چہرہ – چہرے پہ زلف کا سہرا
مہک تیرے بدن کی ہواؤں میں فضاؤں میں رچی ہے
عکس تیرا جو مصور کو بنانا آتا
دیکھنے اس کو میری جان زمانہ آتا
جہاں میں دھوم تیرے حسن کی ہے
پھول کے دھوکے میں دل تجھ سے لگا بیٹھے گا
آج بھنورا تیرے رخسار پہ آ بیٹھے گا
تیرے جلوؤں میں ایسی دلکشی ہے
چاند سورج کی تمنا نہیں رکھتا ہے یہ غلام
اپنے جلوؤں کی کرن ہی کوئی کر دے میرے نام
بدن تیرا سراپا روشنی ہے

Yeh Tera Phool Sa Chehra – Chehray Pah Zulf Ka Sehra
Mehak Tere Badan Ki Hawaoun Main Fazaoun Main Rachi Hay
Aks Tera Jo Musawwar Ko Banana Aata
Daikhnay Usko Meri Jaan Zamana Aata
Jahan Main Dhoom Tere Husan Ki Hay
Phool K Dhokay Main Dil Tujh Say Laga Baithay Ga
Aj Bhanwra Tere Rukhsaar Pah Aa Baithay Ga
Tere Jalwoun Main Aisi Dilkashi Hay
Chand Sooraj Ki Tamana Nahein Rakhta Hay Yeh Ghulam
Apnay Jalwoun Ki Kiran Hi Koi Kar Day Mere Naam
Badan Tera Sarapa Roshni Hay

Film: Aadmi – Musician: M Ashraf
Singer: Mehdi Hassan .. Poet: Qateel Shifai

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *